پنجابی نظم ویلا بابا


یہ پنجابی نظم ‘ویلا بابا’ دراصل ان بزرگوں کے متعلق ہے جو زندگی بھر جدو جہد کے بعد جسمانی قوت کی کمی کی وجہ سے مزید کام نہیں کر پاتے اور ان کے بچے انہیں گھر میں آرام کرنے کا مشورہ دیتے ہیں، مگر یہ آرام کس طرح کا ہوتا ہے یہ وہی جانتے ہیں، کیوں کہ گھر کے چھوٹے موٹے کام مل کر اتنے ہو جاتے ہیں کہ انہیں بہ مشکل ہی آرام کا وقت ملتا ہے۔ اور کہنے کو تو وہ گھر میں فارغ بیٹھے ہوتے ہیں۔ کافی تلاش کے بعد مجھے یہ نظم یونی کوڈ میں نہیں ملی تو میں نے یوٹیوب پر موجود اسکی ویڈیو سن کر اسے خود ہی لکھ لیا، ایسے میں چند چھوٹی چھوٹی غلطیاں خارج از امکان نہیں ۔ اگر آپ کو کوئی ایسی غلطی نظر آئے تو اسکی نشاندہی کر دیجیے تا کہ میں اسے درست کر سکوں۔ نیز اختتام پر اس کی ویڈیو بھی موجود ہے جسے میں اس نظم کے لکھنے والے شاعر نے اسے خوبصورتی سے پڑھا ہے۔

اللہ توبہ کر لینا واں
گھر دا پانی بھر لینا واں
پوتیاں پوتے پھڑ لینا واں
اونہاں نوں‌وی سون دا کہناں
بوہے اگے چاڑو دینا
تھک ٹٹ کے لما پیناں
اونج میں گھر وچ ویلا ہی رہنا

پڑھ کے جدوں نماز میں آناں
پوتیاں پوتے انگلی لاناں
کھیڈن وچ گرونڈ لےجاناں
کھیڈ کھیڈ کے تھک جاندے نے
فیر او مینو اے آہندے نے
بابا جی ہون گھر نوں جائیے
گھر چل کے روٹی کھائیے

پکھ نال جاندے چڑھ نے پوں
گھر آندیاں نوں چھوٹی نوں
او آئے میرے ابا جی
اڈیکن ڈئی سی تواڈی طی
اللہ تواڈی عمر ودھائے
توانوں تتی ہوا نہ لائے
ساڈا وی اک کم کر آؤ
شہروں جا کے رنگ لیاؤ
لے کے رنگ تے چھیتی آنا
روٹی بھاویں آن کے کھانا

جا کے شہر میں پے گیا پلی
رنگ والی دکان نئیں کھلی
ہٹی والے لائی سی چابی
منگیا اوتوں رنگ غلابی
لے کے رنگ میں گھر نوں آیا
پیر نی آلے بوہے پایا
ویکھ کے آہندی میری بڈھی
کتھوں آیاں جانوں دل دا
جنہوں فکر ذرا نئی بل دا
مینوں نا کوئی گل سنانا
بل دا یب مکا کے آنا
فیر توانوں کوئی کم نئیں کہنا
بے شک تاش تے بیٹھے رہنا

ٹر گیا میں پکھا پانا
ہوں نئیں گھر نوں واپس آنا
بیٹھ گیا ویکھ کے بینک دی تھمی
لین سی واوا لگی لمی
بڈھیاں وی سی اوتھے آئیں
کئیاں نے خشبوواں لائیاں
میں وی کوئی ہان دی ویکھاں
جھیڑی ہووے مینوں جان دی ویکھاں
آخر اک نے آن کوایا
بل نئیں جمع کرایا تایا؟
بل نال پیسے ارے پھڑاؤ
تسی بھاویں ہون گھر نوں جاؤ

شالا طیئے خشیاں پاویں
ڈولی پے کے سورے جاویں
گودی دے وچ پت کھڈاویں
اللہ تیرے جیوے ہانی
لے کے میں‌رسید ہے جانی

دے کے بل میں گھر نوں آیا
وڈی نوں نے اے فرمایا
ابا تینوں ویکھ کھلوتی
آئی سکولوں نئیوں پوتی
چھیتی نال سکولے جاؤ
پوتی لے کے گھر نوں آؤ

لے کے پوتی گھرنوں آیا
ماں نے گل چوں بستہ لایا
چمیا چٹیا سینے لایا
برگر اودھے ہتھ پھڑایا
مینوں کسے نے کاہ نئیں پایا

ویڑھے وچ سی منجی ڈٹھی
چادر اتوں کیتی کٹھی
منجی دے نال لک جو لایا
پاسے مار تھکیواں لایا
سارے آ کے ایھو ہی کہین
جاناں نئی جے ہانڈی لین؟

بڈھی میری لاگے آئی
کھچ کے باں میں کول بٹھائی
او سانوں وی گل سنان دے
نا کر ایداں جان دے
گھر نوں آپوں ترخان دے
تیرے چالے ہیں چھتر کھان دے
او کھوتے وانگوں زلفی وایا
کسی نئیں چاہ دا کپ پیایا
اور روٹی دے دو تہانوں کہنا
منیا گھر وچ ویلا ہی رہنا

سبھی کو میری طرف سے پرمسرت اور خوشیوں بھری عید مبارک


About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Poetry, Urdu and tagged , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

3 Responses to پنجابی نظم ویلا بابا

  1. this poem is written by “Ali Zulfi”

    I have a complete book of his funny poetry…..

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s