اچھالیں اب مغربی شدت پسندی کو بھی


بی بی سی کی خبر ہے جرمنی میں ایک مصری خاتون کو حجاب پہننے پر پہلے تو تنگ کیا گیا پھیر جب وہ باز نہیں آئی تو چاقو کے شدید وار کر کے اسکو قتل کردیا، خاتون حاملہ بھی تھیں ، مرحومہ کے شوہر اپنی رفیق حیات کو بچاتے ہوے شدید زخمی ہوے اور ابھی تک ہسپتال میں ذندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں، پہلے تو میں بہت حیران ہوا کہ بی بی سی والوں نے ایسی خبر کیوں چھاپ دی ، بی بی سی پر کشمیر میں بھارتی مظالم کی ایک خبر بھی نہیں ہوتی لیکن حریت پسندوں کی جوابی کاروائی کا ذکر ضرور ہوتا ہے جسے دہشت گردی کی ذمرے میں لکھا جاتا ہے

سوات میں لڑکی کو کوڑے مارنے کی جعلی ویڈیو دکھائی گئی تو پوری دنیا نے شور مچایا اور کچھ پاکستانیوں نے بھی جنہوں نے اپنا ایمان پیسے کے عوض بیچا ہوا ہے، اب مغربی شدت پسندی کی خبرکو بھی اچھالیں نا، مسلمانوں پر تو زور شور سے چڑھ دوڑتے ہیں ان گوری چمڑی والوں پر بھی چڑھ کے دکھائو، یہ قتل بھری عدالت میں ہوا جہاں پولیس بھی اس مجرم کو روک نہ سکی اور اسے نے خاتون پر ۱۸ وار کیے مگر پولیس شاید سو رہی تھی

بی بی سی والے اس خبر کو مٹا نہ دیں اس لیے اسکو کاپی کر کے یہاں رکھ رہا ہوں تا کہ کوئی ثبوت تو رہے ، ساتھ ہی اس خبر کا سکرین شاٹ بھی

innocent-lady-killed-in-germany

innocent-lady-killed-in-germany

خبر کا ربط

http://www.bbc.co.uk/urdu/world/2009/07/090707_egypt_headscraft_sz.shtml

شکریہ

شیربینی کو مصر میں حجاب کے لیے شہید قرار دیا گیا ہے

جرمنی کی عدالت میں قتل کی گئی ایک مسلم خاتون کی لاش ان کے آبائی وطن مصر لائی گئی ہے جنہیں حجاب کے لیے شہید قرار دیا گیا ہے۔

انہیں ایک اٹھائیس سالہ جرمن شخص نے عدالت میں چاقو مار کر ہلاک کردیا تھا جسے عدالت نے خاتون کے مذہب کی توہین کرنے کا قصور وار پایا تھا۔

اکتیس برس کی مصری خاتون مروی شیربینی پر جرمن شخص ایکسل ڈبلیو نے اٹھارہ بار چاقو سے حملہ کیا تھا۔ ایکسل کو قتل کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا ہے۔

شیربینی کے شوہر ایلوی عکاظ اس حملے میں شدید طور پر زخمی ہوئے تھے جو ہسپتال میں زندگی اور موت سے لڑ ہیں۔ عدالت میں حملے کے وقت انہوں نے اپنی بیوی کو بچانے کی کوشش کی تھی۔

شیربینی کو سکندریہ میں دفن کیا گیا ہے اور ان کے جنازے میں جرمن سفارت کاروں سمیت مصر کے اعلی اہلکاروں نے بھی شرکت جہاں پر سینکڑوں سوگوار بھی موجود تھے۔

شیربینی حجاب کے طور پر سکارف پہنتی تھیں جس پر ایکسل نے انہیں ’دہشتگرد‘ کہا تھا۔ اپنی مذہبی شناخت کی توہین کے خلاف شیربینی نے عدالت میں ایکسل کے خلاف مقدمہ کیا اور عدالت نے ایکسل کو قصوروار پاکر ان پر تقریبا پچاس ہزار روپے کا جرمانہ بھی عائد کیا تھا۔ یہ واقعہ دو ہزار آٹھ کا ہے ۔

ایکسل نے عدالت کے اسی فیصلے کے خلاف اپیل کی تھی اور مقدمے کی سماعت کے لیے شیربینی اپنے پورے خاندان کے ساتھ وہاں موجود تھیں جب قاتل نے ان پر چاقو سے حملہ کیا۔ ڈاکٹروں نے کوشش بہت کی لیکن انہیں نہیں بچایا جا سکا۔ وہ تین ماہ کی حاملہ تھیں۔ حملے کے وقت ان کا تین سالہ بیٹا بھی ان کے ساتھ تھا۔

اطلاعات کے مطابق شیربینی کے شوہر عکاظ بچانے کی کوشش میں قاتل کے چاقو اور پولیس کی گولی دونوں سے زخمی ہوئے جن کی حالت نازک ہے۔ جرمنی میں وکلاء کا کہنا ہے کہ اٹھائس سالہ شخص میں بیرونی خاص طور پر مسلمانوں سے سخت نفرت پائی جاتی ہے۔

اس کیس میں مسلم دنیا خاص طور پر مصر کی بڑی دلچسپی رہی ہے۔ مصر کے اخبارات نے اس بات پر زبردست برہمگی ظاہر کی ہے کہ آخر ایک قصور وار شخص عدالت میں چاقو کیسے لے گیا اور یہ سب عدالت میں ہونے کی اجازت کس نے دی۔ میڈیا میں شیربینی کو ’حجاب کا شہید قراردیا گیا ہے۔‘


About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Islam, Urdu and tagged , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

8 Responses to اچھالیں اب مغربی شدت پسندی کو بھی

  1. Rehan says:

    اس فرنگی میڈیا کے پروپگنڈا بازی سے ہم سب کو ہوشیار رہنا چاہیے ۔۔ خاص کر اس میڈیا کے مزہبی پروگرامز میں جب اسلام کو بیاں کیا جاتا ہے تو بیاں کرنے والے کی زباں سے ہر دوسرا جملہ جھوٹ کا پلندہ ہوتا ہے ۔

    کچھ دن پہلے میں ایک امریکن کرسچن پادریوں کی قائم کردہ چینل پر گیا ۔۔ کیا دیکھا جناب لوگ اسلام کا انٹروڈیکشن دے رہے تھے ۔۔ جب چلایا تو میں ہر پل یہی سوچتا رہا کہ یہ لوگ اپنے پروپگنڈے کو کیسے چمکا کر پیش کرتے ہیں کہ دیکھنے والا پھر یہی سوچتا ہوگا کہ ارے اتنا اچھا کیمرہ ورک اتنا اچھا فیلڈ ورک یہ ضرور سچے ہونگے ۔۔

  2. Jeech says:

    حیران ہونے کے لئے ایک اور بات یہ بھی ہی کہ بی بی سی نے یہ بات بھی واضح نہیں کی کے آیا قاتل عیسائی دہشت گرد تھا یا ہندو، آ یا کہ اس کا تعلّق کسی مغربی انتہا بسند تحریک سے تھا یا وہ سرکاری دہشت گرد تھا جیسا کہ سرکاری افراد کے زیرے انتظام اس دہشت گردانہ کروائی کو اجام تک پہنچایا گیا. اور ویسے بھی کسی مسلمان ملک سے تعلّق رکھنے والے کو اسلامی دہشت گرد قرار دینے مے یہی بی بی سی بجلی کی سی تیزی دکھاتا ہی بہرحال اب اگر یہ کروائی کامیابی ک ساتھ سرانجام ہو چکی ہی تو اس سے مغربی دنیا زیادہ سے زیادہ کیا اور کتنا فائدہ حاصل کرسکتے ہیں یہ بات شاید چند روز مے واضح ہو جاۓ گی. فرانسیسی صدر نے جسے کہ پہلے ہی نقاب کو ممنوعہ شے قرار دے دیا تھا اپ یہ واقعہ مسلم خواتین کو ہراساں کرنے کے لئے بہت مدد گار ثابت ہوگا. (خدا نہ خواستہ )…. ویسے بھی متقی حضرات کو اب مغرب سے پرہیز ہی کرنا چاہے ورنہ رہی سہی آبرو بھی جاتی رہے گی.

  3. Jeech says:

    حیران ہونے کے لئے ایک اور بات یہ بھی ہی کہ بی بی سی نے یہ بات بھی واضح نہیں کی کے آیا قاتل عیسائی دہشت گرد تھا یا ہندو، آ یا کہ اس کا تعلّق کسی مغربی انتہا بسند تحریک سے تھا یا وہ سرکاری دہشت گرد تھا جیسا کہ سرکاری افراد کے زیرے انتظام اس دہشت گردانہ کروائی کو اجام تک پہنچایا گیا. اور ویسے بھی کسی مسلمان ملک سے تعلّق رکھنے والے کو اسلامی دہشت گرد قرار دینے مے یہی بی بی سی بجلی کی سی تیزی دکھاتا ہی بہرحال اب اگر یہ کروائی کامیابی ک ساتھ سرانجام ہو چکی ہی تو اس سے مغربی دنیا زیادہ سے زیادہ کیا اور کتنا فائدہ حاصل کرسکتے ہیں یہ بات شاید چند روز مے واضح ہو جاۓ گی. فرانسیسی صدر نے جسے کہ پہلے ہی نقاب کو ممنوعہ شے قرار دے دیا تھا اپ یہ واقعہ مسلم خواتین کو ہراساں کرنے کے لئے بہت مدد گار ثابت ہوگا. (خدا نہ خواستہ )…. ویسے بھی متقی حضرات کو اب مغرب سے پرہیز ہی کرنا چاہے ورنہ رہی سہی آبرو بھی جاتی رہے گی.

  4. Jeech says:

    I can’t post comment at this site, i don’t know why.. I wrote a long long urdu post, pasted here and sent but after reloading the page there was no post I sent. why? do you have any restrictions to some certain posters?

  5. آپ کی بات درست ہے اب کوئی نہیں بولے گا اور نہ میڈیا اس کی کوریج کرے گا۔ ڈینیل پرل کے قتل پر فلم بن سکتی ہے مگر اس واقعے پر نہیں۔

  6. میں ماضی میں مغربی دنیا کی دہشتگردی کی تصاویر پیش کرتا رہا ہوں ۔
    مسئلہ یہ ہے کہ ہم لوگوں میں اکثر مغربی دنیا کے ذہنی غلام ہیں اور ان کی تقلید میں اپنوں کے خلاف بہتان تراشی کرتے رہتے ہیں

    افتخار اجمل بھوپال
    http://www.theajmals.com/blog

  7. Yasir Imran says:

    جناب جیچ صاحب، تمام کمنٹس بلاگ پر شائع ہونے ہسے پہلے تجزیہ سے گزارے جاتے ہیں پھر انہیں شائع کیا جاتا ہے ، آپ کی لکھا گیا خیال شائع کردیا گیا ہے، میں آپ کے خیالات سے متفق ہوں، مغربی دنیا اب روز بروز اسلام کے خلاف اپنی نفرت کا اظہار واضح کرتی جا رہی ہے

  8. باسم says:

    بی بی سی نے خبر تو لگادی مگر اس کا بدلہ سرخی میں خوب خوب لیا ہے
    پہلے شہادت پر طنز کیا ہے
    ’حجاب کے لیے شہید‘
    پھر الٹا مقتولہ کو دہشت گرد قرار دے دیا
    عدالت میں ’مسلم دہشتگرد‘ قتل

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s