آج ملبوس میں ہےکیسی تھکن کی خوشبو


آج ملبوس میں ہےکیسی تھکن کی خوشبو

رات بھر جاگی ہوئی جیسے دلہن کی خوشبو

پیرہن میرا مگر اس کے بدن کی خوشبو

اس کی ترتیب ہے ایک ایک شکن کی خوشبو

موجہءِ گل کو ابھی اذنِ تکلم نہ ملے

پاس آتی ہے کسی نرم سخن کی خوشبو

قامتِ شعر کی زیبائی کا عالم مت پوچھ

مہرباں جس سے ہے اس سرو بدن کی خوشبو

ذکر شاید کسی خورشید بدن کا بھی کرے

کو بہ کو بھیلی ہوئی میرے گہن کی خوشبو

عارضِ گل کو چھوا تھا کہ دھنک سی بکھری

کس قدر شوخ ہے ننھی سی کرن کی خوشبو

کس نے زنجیر کیا ہے رمِ آہو چشماں

نکہتِ جاں ہے انہیں دشت و دمن کی خوشبو

اس اسیری میں بھی ہر سانس کے ساتھ آتی ہے

صحنِ زنداں میں انہیں دشتِ وطن کی خوشبو

پروین شاکر


About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Poetry, Urdu and tagged , , , , , , , . Bookmark the permalink.

One Response to آج ملبوس میں ہےکیسی تھکن کی خوشبو

  1. Billu says:

    Very well written

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s