راول پنڈی واہ کینٹ میں دو خود کش دھماکے 17 جاں بحق


راول پنڈی کے علاقے واہ کینٹ میں دو خود کش دھماکوں میں کم از کم 17افراد جاں بحق ۔متعدد زخمی۔وزیراعظم کی دھماکوں کی مذمت۔ ملک بھر کے حساس مقامات پر سیکورٹی ہائی الرٹ کر دی گئی:

واہ کینٹ (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔21اگست۔2008ء)واہ کینٹ کی آرڈیننس فیکٹری میں دو دھماکوں میں کم از کم 17افراد جاں بحق اور 56 سے زائد افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ ان میں سے کئی کی حالت تشویش ناک ہے ۔ ریجنل پولیس افسر راولپنڈی ناصر خان درانی نے تصدیق کی ہے کہ یہ دھماکے خودکش تھے ۔

وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے فوری تحقیقات کا حکم دے دیا ہے ۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق دھماکے واہ کینٹ کی حدود میں ہوئے ۔ عینی شاہد ین کا کہنا ہے کہ دھماکے اس وقت ہوئے جب ملازمین چھٹی کے بعد فیکٹری سے نکل رہے تھے ۔ ملازمین کی تعداد زیادہ ہونے کی وجہ سے وہاں رش زیادہ تھا۔اس وجہ سے لوگ بڑی تعداد میں زخمی ہوئے ۔زخمیوں کی تعداد زیادہ ہونے کی وجہ سے قریبی شہروں سے بھی ایمبولینسیں طلب کر لی گئیں ۔ امدادی ٹیموں کے ذرایع کا کہنا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد میں اضافہ کا خدشہ ہے ۔ جب کہ ایدھی زرائع کا کہنا ہے کہ جائے حادثہ سے بارہ لاشیں اٹھائی جا چکی ہیں۔سیکورٹی فورسز اور پولیس نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے ۔اورعلاقے میں نصب کلوز سرکٹ کیمرں کی مدد سے واقعے کی ویڈیو حاصل کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔دھماکوں کے بعد کراچی،لاہور سمیت ملک بھر کے حساس مقامات پر سیکورٹی ہائی الرٹ کر دی گئی ہے ۔

21/08/2008 15:09:41 : وقت اشاعت

at bbc

واہ فیکٹری: خودکش حملے، چالیس افراد ہلاک، درجنوں زخمی

شہزاد ملک
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد

واہ فیکٹری میں پاکستان فوج کے لیے اسلحے اور دیگر ساز و سامان بنائے جاتے ہیں
واہ فیکٹری میں فوج کے لیے اسلحے اور دیگر ساز و سامان بنائے جاتے ہیں

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد سے پینتیس کلومیٹر دور واقع پاکستان آرڈیننس فیکٹری کے مرکزی دروازوں پر دو خودکش حملے ہوئے ہے۔ پولیس کے مطابق ان خود کش حملوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد چالیس سے زائد ہے جبکہ درجنوں افراد زخمی ہوئے ہیں۔

ریجنل پولیس افسر راولپنڈی ناصرخان درانی نے بی بی سی کو بتایا کہ ابتدائی اطلاعات کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں سارے سویلین تھے۔ ان میں کوئی فوجی اہلکار شامل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ خودکش حملے اُس وقت ہوئے جب شفٹ تبدیل ہو رہی تھی۔

ناصرخان درانی نے کہا کہ باجوڑ اور دوسرے قبائلی علاقوں میں شدت پسندوں کے خلاف ہونے والی کارروائی کے بعد پنجاب اور بالخصوص راولپنڈی پولیس کو ریڈ الرٹ کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ آرڈیننس فیکٹری ایک فوجی علاقہ ہے اس لیے وہاں سکیورٹی کے فرائض سکیورٹی فورسز کے اہلکار ہی انجام دیتےہیں۔

فوجی ہلاک نہیں ہوئے
ریجنل پولیس افسر راولپنڈی ناصرخان درانی نے بی بی سی کو بتایا کہ ہلاک ہونے والوں میں سارے سویلین تھے۔ ان میں کوئی فوجی اہلکار شامل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ خودکش حملے اُس وقت ہوئے جب شفٹ تبدیل ہو رہی تھی۔

ناصر خان درانی کے مطابق یہ خودکش حملے اُسی نوعیت کے ہیں جس طرح دو روز قبل ڈیرہ اسماعیل خان کے ایک ہسپتال میں ہوا تھا۔

واہ کینٹ کے ڈی ایس پی شہباز خان نے پہلے ہلاکتوں کی تعداد چالیس بتائی ہے۔ انہوں نے ہلاکتوں کی تعداد پہلے صرف تیرہ بتائی تھی۔ انہوں نے کہا کہ یہ دونوں خودکش حملے تھے اور ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔

ڈی ایس پی شہباز خان کے مطابق پہلا دھماکہ مرکزی گیٹ پر جبکہ دوسرا دھماکہ گیٹ نمبر ایک پر ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ خودکش حملہ آوروں نے خود کو اُس وقت دھماکے سے اُڑا دیا جب ملازمین چھٹی کرکے گھروں کے لیے جا رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ خود کش حملہ آوروں کی لاشیں بھی وہاں پر پڑی ہوئی ہیں جو قابل شناخت نہیں ہیں۔

اس فیکٹری میں پاکستانی افواج کے لیے اسلحہ تیار کیا جاتا ہے اور اس علاقے میں سکیورٹی انتہائی سخت ہوتی ہے۔ ان خودکش حملوں کے بعد فوجی اہلکاروں نے پورے علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے جبکہ ان حملوں میں زخمی ہونے والے افراد کو قریبی ہسپتالوں میں داخل کروا دیا گیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق سکیورٹی فورسز کے علاوہ کسی کو بھی جائے حادثہ پر جانے کی اجازت نہیں دی گئی ہے۔ مقامی پولیس کا کہنا ہے کہ ان خود کش حملوں میں زخمیوں میں سے پچیس افراد کے حالت تشویش ناک ہے۔


About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in News and tagged , , , , . Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s