Pakistan Tehreek e Insaf Election 2013 Campaign in Punjab

Imran Khan chairman of PTI – Pakistan Tehreek e Insaf started a great Election Campaing in April and May 2013. The campaign is much helpful in getting votes for PTI on 11 May Election day. Pakistani Youth participated with passion and love in this campaign.


Posted in Pakistani Politics, Pictures | Tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Leave a comment

PTI Rally and Jalsa Pictures

Random Pictures of PTI Rallies and Jalsas in Pakistan

Posted in Pakistani Politics, Pictures | Tagged , , , , , , , , , | Leave a comment

PTI Election Campaign 2013 in Pakistan

PTI created a great political awareness and change in Pakistan. Below are various PTI Election Campaign Photographs.

Posted in Pakistani Politics, Pictures | Tagged , , , , , , , , , , , , , , , | Leave a comment

PTI All the Way PTI Everywhere

PTI All the Way PTI Everywhere. The following pictures can represent Political Activities in Pakistan.

Like Facebook Page https://www.facebook.com/pti.alltheway

Posted in Pakistani Politics, Pictures | Tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | 3 Comments

Social Media’s Protest against Race2 Movie Poster

Social Media Protest against Race2 Movie Poster

Social Media Protest against Race2 Movie Poster

Social Media is so angry about using Quranic Verse in Indian Movie Race2 ‘s poster. While seeing multiple posters I found that actually the Poster designer has used Any Mosque’s picture as a background which has Islamic Calligraphy and Quran Verses on its walls decoration. A lot of people on Pakistani Social Media scene think that putting Quran verse beside a partially nude model is blasphemy (of Quranic Verse) so they are protesting to ban Race2 Movie and its publicity.

I don’t know a Mosque’s background was used in the movie poster intentionally or unintentionally, is that planned or a small mistake of Graphic Designer and I don’t even know how Muslims should react on this.

However such examples are commonly found in our society. Another example of such an act is; Quran Verses are printed occasionally in Pakistani newspapers and pictures of many actress/models are printed either on the same page or another fold of the newspaper. After expiration these newspapers are used for serving Snacks and Samosas country-wide. These pieces of newspapers are thrown away into streets under people’s feet or kept in-between bricks of building walls. Which is also an insult to Quran. Then why don’t we raise objections on Newspapers + Our Society for blasphemy.

Few years back, I have seen a TV report on Torn papers from Quran found in mud of Lahore canal and only one man from society is gathering these papers with Quran verse and handling them with respect.

One friend of mine Bilal Khan at Social Media has a different opinion, “Social media raises such posts only to get more Likes, more visitors and more attention, nothing else”. Another friend Abbas Bashir said that “Protest is our right and we must do it when somebody will do the blasphemy act, Protest is the right approach to stop such acts in future”.

Mehran Fida, another buddy added into conversation “Agree with yasir bhai….Some times a shared SERVER company keep both porn and Islamic sites and contents together ……lets not stick on these things make ur self according to Islam …act on Islamic golden rules…..make ur self powerful and then go for revenge”

Famous TV Actor Asad Malik, who also like to join such debates has a unique opinion. “As for me as a Muslim, verses of The Gita are only words, in the same way Quran Verses in Islamic Calligraphy is only a decoration for non-Muslims. How can someone declare it a blasphemy act ? It is us who do blasphemy acts regularly in our daily life. Even after understanding teaching of Quran, We keep repeating actions which are forbidden in Islam.”

He said,

“Does it really matter at all yasir ??? Meray liye geeta ke ashlok sirf aik “likhaayi” hain, so un logon ke liye bhi ye aik sajaawat ki cheez hai…

Iss main aayat ki bay hurmatee kesay ho gaee???

Tauheen to me karta hoon in aayaat ki dailay basis par, jo samajh kar bhi wohi karta chalaa jaata hoon jis se ye aayaat rok rahi hain”

The purpose of writing this post is how long we keep protesting against such small issues, such protests are just like hurting ourselves, hurting our society, hurting our country, Such protests cannot stop negative people to repeat such actions and destroying world peace and relations between Muslims and non-Muslims. Instead of protesting we should develop a clear policy country-wide or world-wide upon which the whole world agrees. It could be a mutual agreement between Muslims and non-Muslims. “We will respect your (non-Muslims) believes and you will respect ours”

Political platform at a Global level could be a right place for it, not our streets and parks.

No offence to anyone.

Posted in Islam | Tagged , , , , , , , , , , , , , | Leave a comment

پاکستانیوں کے نظریاتی کمزوری اور نااتفاقی

محمد علی جناح نے جس ایک مضبوط نظریے کی بنیاد پر پاکستان بنایا تھا اور قوم کو ایک نظریے پر اکٹھا کیا تھا آج وہی قوم نظریاتی طور پر شدید ٹوٹ پھوٹ اور اختلافات کا شکار بن چکی ہے، یہی وجہ ہے کہ نا اہل لوگوں کو اس قوم پر حکمرانی کا موقع ملتا ہے، نہ صرف موقع بلکہ نا اہل حکومت چلتی بھی رہتی ہے، پاکستان کے بڑھتے ہوے مسائل کا سبب جہاں حکمران ہیں وہیں عوام بھی برابر ذمہ دار ہے، نظریاتی اختلاف، نفرتیں اور اتفاق رائے کی کمی جہاں نااہل لوگوں کو مسند اقتدار پر قبضے کا موقع فراہم کرتی ہے وہیں ہر شعبے، تعلیم، صحت، ٹرانسپورٹ، توانائی، دریائوں کے پانی کی تقسیم اور انتظامی امور کی پسماندگی کا باعث بھی بنتی ہے، ہمارے ملک کے یہ سب شعبے اسی لیے ترقی نہیں کر پائے کیوں کہ ہماری قوم نظریاتی طور پر کمزور ہو چکی ہے۔ اس کے ثبوت کے طور پر آپ پاکستانی معاشرے کا کوئی بھی شعبہ دیکھ لیں آپ کو اختلافات کی ایک جنگ ملے گی۔ سیاست ، مذہب، ادب، حکومتی ادارے، عدالتیں، وکلا، صحافی، ٹی وی چینلز، کسی بھی شعبے میں آپ کو نظریے کی بنیاد پر یک جہتی نظر نہیں آئے گی۔ اسی نا اتفاقی کا فائدہ ہر دشمن اٹھا رہا ہے۔ یہ میری ایک سوچ ہے، سوشل سٹڈیز کے ماہرین اس پر مزید روشنی ڈال سکتے ہیں۔

Posted in Pakistani Politics, Urdu | Tagged , , , , , , , , , , , , , , | Leave a comment

پاکستانیوں کو نظام دیں، بھیک نہیں

zardari-scheme

صدر زرداری گزارا الاونس سکیم کا آغاز کرتے ہوے


ابھی ابھی فیس بک پر ایک خبر دیکھی، پاکستان کے صدر زرداری نے گزارہ الائونس سکیم  کا افتتاح کیا ہے جس کا مقصد غریب عوام کی زندگی کو بہتر بنانا ہے، ادھر شہباز شریف جو کہ پنجاب کے وزیر اعلی اور پتہ نہیں کیا کیا ہیں  طلبا کو سولر لیمپ دے رہے ہیں، اس سے پہلے پی پی پی بے نظیر انکم سپورٹ کے تحت عوام میں پیسے تقسیم کرتی رہی اورپنجاب میں ن لیگ سستی روٹی سکیم کے تحت ایک روپے کی روٹی دیتی رہی جو کہ کچھ عرصہ بعد ایک فلاپ سکیم ثابت ہوئی، میری پاکستانی حکمرانوں سے گزارش ہے کہ پاکستانی عوام کو پیسوں اور چیزوں کی مدد دے دے کر بھکاری نہ بنائیں، ان کو اپنے پیروں پر کھڑا ہونے میں مدد دیں، ان کو بھیک نہ دیں، ان کو بہتر نظام دیں جہاں ہر کسی کو نوکری ملے، انڈسٹری ترقی کرے، علم و ہنر کی قدر ہو، ہر کوئی اپنی محنت کے پیسے سے خود سولر لیمپ اور لیپ ٹاپ خرید سکے، پاکستانی سیاستدانوں کا ہمیشہ سے یہی شیوا ہے کہ وہ عوام کو خیرات اور بھیک دیتے ہیں کبھی بھی انہوں نے نظام کو جڑ سے بہتر بنانے کی کوشش نہیں کی

Posted in Urdu | Tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | 3 Comments

مسلم لیگ ن بمقابلہ تحریک انصاف – ایک سیاسی تجزیہ

 nawaz-sharif

ملک ارشد اعوان جو کہ فیس بک پر میرے احباب میں سے ایک ہیں، ملکی سیاست پر کچھ ایسا نقطہ نظر رکھتے ہیں  انہوں نے پارٹی کی مقبولیت یا صلاحیت سے ان کو نمبرشمار بھی دے دیا ہے، ان کے مطابق ن لیگ پہلے، پی پی پی دوسرے اور فضل الرحمن کی پارٹی تیسرے نمبر پر رہے گی، پہلے اسے پڑھیے پھر نیچے میں اپنا نقطہ نظر پیش کروں گا۔

جمہوریت بدنام ہوئی زارداری تیرے لیے

اج اگر پاکستان میں جمہوریت قائم و دائم ہے تو اس کے پیچھے پاکستان مسلم لیگ ن کے سربرا ہ نواز شریف کا بھی بہت بڑا کردار ہے گو کہ اس راہ میں ان پر نوراکشتی فرینڈلی اپوزیشن اور نہ جانے کیا کیا الزامات لگے مگر وہ ثابت قدم رہے اور کسی تنقید کی پرواہ نہیں کی وہ دراصل جمہوریت کو تو سپورٹ کر ہی رہے تھے مگر فائدہ زرداری اٹھاتا رہا نواز شریف نے ایسا کیوں کیا اس کی کئ وجوہات ہو سکتی ہیں مگر جو سب سے بڑی وجہ سمجھ میں اتی ہے وہ یہ ہے کہ پاکستان میں ہمیشہ جمہوریت اور جمہوری ادروں کے ساتھ جو سلوک ملٹری ڈکٹیٹر کرتے رہے ہیں وہ سب کے سامنے ہے اور نواز شریف نے جلاوطنی سے بہت کچھ سیکھا تھا اور اگر وہ ایسا نہ کرتے تو ان کو پھر جمہوریت کے طعنے سہنہ پڑتے اور ان کو دوبارملٹری کے اتحادی کا طعنہ دیا جاتا بہر حال ائی ار ائی کے تازہ سروے نے لوگوں نے ان کےاس موقف پر مہر تصدیق ثب کردی ہے اب وہ کہہ سکتے ہیں عمران تو حمہوریت کو ڈی ریل کرنے کی خاطر ان پر تنقعید کرتا تھا. جس کے موقف کو لوگ اب اہستہ اہستہ مسترد کرنے لگے ہیں وہ سمجھتے ہیں عمران دراصل یہ ساری گیم زرداری کو فایدہ پہچحانے کی خاطر کر رہاتھا تاکہ زرداری اگلے پانچ سال بھی حکومت میں رہ سکے ۔ بہرحال اب اس بات میں ابہام اب ختم ہو گیا ہے کہ اگر زرداری کو اگلے پانچ حکومت میں انے روکنا ہے تو نوازشریف کا ساتھ دینا ہوگا یعنی لوگ اب عمران کے بجاے ن لیگ کو زرداری کا اصل حریف سمجھتے ہیں اسکی کئ وجوہات ہیں مگر سب سے بڑی وجہ عمران کی دوغلی سیاست ہے اور اس کے بعد نوازشریف کی زات پر اٹیک کرنا اور بد تمیزی سے لوگوں کے نام لینا جیسے ڈینگی برادران گنجے وغیرہ لوگ ایسی جیزیں پسند نہیں کرتے الٹا اگلے بندے سے ہمدردی کے جزبات میں اضافہ ہوتا ہے یہی وجہ ہے تحریک انصاف کے کئ سپورٹر نے ن لیگ کی حمایت کا فیصلہ کیا اور عمران کی سیاست سے نفرت کا اظہار کیا ہے عمران کو اب ان سروے کے مندرجات کو غور سے پڑھ کر ایک ایک چیز کا باریک بینی سے جائزہ لینا چاہے اور ایسے لوگوں کو پارٹی پالیسی سے دور رکھنا چاہیے جو اس کی پالیسوں کو الٹا کر کے لاگو کرتے ہیں عمران کو چاہے کہ وہ نواز شریف پر تنقید کے بجاے زرداری کو اپنے نشانے پر رکھ لے تو پھر کچھ بہتری اسکتی ہے اور اگر اپ پاکستان کی سیاست کو سمجھتے ہوں تو اپ کو ایک بار پھر بتا دوں کہ اگلے الیکشن میں عمران کی تحریک انصاف شاید 2سے4 قومی کی سیٹیں لے سکے وہ بھی سرادار آصف احمد علی کے جیسے لوگوں کی صورت میں اس وقت تحریک انصاف کے پاس صرف 10کےقریب الیکٹ ایبلز ہیں ان میں شاہ محمود قریشی اور عمران تو اپنی سیٹیں ہار سکتے ہیں اگر کسی کو شک ہو تو ان کے حلقوں میں جا کر لوگوں سے پوچھ سکتا ہے وہ اس دفعہ ن لیگ پورے ملک سے اکثریت لیکر اقتدار میں ا سکتی ہے اور اپوزیشن پھر پی پی کے پاس اجاے گی اور تیسرا نمبر مولوی فضل الرحمان کا ہو گا تحریک انصاف تو ق لیگ سے پہلے ہی ہو سکتی ہے۔

ملک ارشد اعوان

imran-khan-pti (8)

پیسے کی طاقت یا اللہ کی طاقت

ہم زرداری پر بات نہیں کر سکتے،  کرنے کی ضرورت بھی نہیں ہے، سبھی جانتے ہیں کہ وہ کس طرح منتخب ہوا، اور کس طرح ہر کسی کو کرپشن کی کھلی چھوٹ دے کر، اور مجرمین کے سیاسی مقدمات ختم کرا کر اس نے اپنی حکومت جاری رکھی، وہ عوام دوستی کا دعوی کرتا ہی نہیں، اس کی تقریر کا موضوع بھی شہید بی بی، پارٹی جیالے اور مظلوم سندھی وڈیرے ہی ہوتے ہیں، تاہم نواز شریف جسے عوام نے اپنے دکھوں کا مداوا کرنے کے لیے منتخب کیا اس نے جمہوریت بچاتے بچاتے عوام کا کباڑا کر دیا، نواز نے زرداری کو جمہوریت بچانے کے لیے نہیں بلکہ اپنی باری کے لیے سپورٹ کیا، نواز شریف کی طاقت ، پیسے سے خریدے جانے والے وہ افراد ہیں جو اپنے علاقے میں اثر و رسوخ کی وجہ سے ہمیشہ الیکشن جیت جاتے ہیں، ان کا کوئی دین ایمان نہیں ہوتا، پیسے کے لیے یہ لوگ کسی بھی وقت بک جاتے ہیں، بلاشبہ پاکستانی ووٹر کی ذہنیت کے مطابق ایسے لوگ ہی جیتیں گے، لیکن ان کے جیتنے سے ان کے حلقے کے لوگوں کو کبھی فائدہ نہیں ہو گا، بلکہ یہ لوگ لٹیرے ہی رہیں گے، اور مستقبل میں یہ نواز شریف کو بھی چھوڑ کر جا سکتے ہیں، نواز شریف کو انہیں اپنے ساتھ رکھنے کے لیے ہر وقت ہڈی کھلاتے رہنا پڑے گا، ان کی کرپشن کو اگنور کر کے مزید کرپشن کے لیے فری ہینڈ دینا پڑے گا، نتیجہ کیا ہو گا ؟ مزید کرپشن، مزید تاریکی، ایسے میں ہم کہہ سکتے ہیں کہ نواز شریف کی مقبولیت پاکستان میں دس فیصد سے زیادہ نہیں، نواز شریف ان خریدے ہوے اثر و رسوخ والے بندوں کے بغیر کچھ بھی نہیں، انہیں لوگوں کا زیادہ ریٹ لگا کر کل پی پی پی بھی انہیں خرید سکتی ہے، ایم کیو ایم بھی خرید سکتی ہے، نواز شریف پیسے سے خریدے ہوے سارے ممبر ایک طرف رکھ دے تو وہ اس قابل بھی نہیں رہ جائے گا کہ قومی اسمبلی کی پانچ سیٹیں جیت سکے۔

حقیقت پسندی یہی ہے ، نواز شریف کے لیے بھی اور عمران خان کے لیے بھی، اس ملک کے باشندے سوچ سمجھ کر ووٹ نہیں دیتے بلکہ اپنے اپنے علاقے کے طاقتور افراد کو ووٹ دیتے ہیں، جن سے یہ چند چھوٹے چھوٹے فائدے حاصل کر سکیں، مثلا اپنا بندہ پولیس یا کسی دوسرے سرکاری محکمے میں لگوا لیا، کسی ناجائز قبضے کو جائز میں بدل لیا، اور اپنے کم میرٹ والے بیٹے کو اچھے کالج میں داخل کروا لیا، ان چھوٹے چھوٹے فائدوں کے لیے عوام اپنا ووٹ بیچ دیتے ہیں، اجتماعی فائدے کی بجائے ذاتی فائدے کو ترجیح دیتے ہیں، نواز شریف پاکستانی ووٹر کی ذہنیت سمجھ چکا ہے اس لیے وہ دھڑا دھڑ طاقتور اور بارسوخ الیکٹ ایبل افراد خرید رہا ہے، عمران خان بے ایمانی اور دھوکے سے شدید نفرت کرتا ہے، وہ سیدھے رستے پر چل کر کامیابی حاصل کرنا چاہتا ہے، اسے پیسے کی طاقت پر یقین کی بجائے اللہ کی طاقت پر یقین ہے، اور اب اللہ تعالی ہی بہتر جانتا ہے کہ مستقبل قریب میں اس نے پاکستانی قوم کے لیے کیا منتخب کر رکھا ہے ، بہتری یا وہی پرانا طرز زندگی، اس کا انتخاب عوام نے خود کرنا ہے، ایک اصول پسند اور سچا انسان، ایک بے اصول شیر سے کئی گنا طاقتور ہوتا ہے۔

یاسر عمران مرزا

Posted in Urdu | Tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , | Leave a comment