ڈاکٹروں کی بھی سنیں، ڈاکٹروں کو بھی کہنے دیں


how-media-makes-right-to-wrong

How Media can change people’s opinion and makes right to wrong

 

کسی بھی فریق کے قصور وار ہونے کا فیصلہ اس کی بات سننے سے قبل نہیں دیا جا سکتا۔ زیادہ تر پاکستانی فیس بک اور دیگر سوشل میڈیا پر ڈاکٹروں کو گالیاں دے رہے ہیں۔ جس میں بہت حد تک ڈاکٹروں کے خلاف حکومت کے ایما پر میڈیا کا پروپیگنڈا ہے۔ ہم یہ کیوں بھول رہے ہیں کہ آجکل کے دور میں میڈیا کے ذریعے کسی بھی درست کو غلط اور غلط کو درست ثابت کیا جا سکتا ہے۔ حکومت وقت جیسے طاقتور فریق کے لیے خود کو مظلوم اور جرم سے مبرا ثابت کرنا کس قدر آسان ہو سکتا ہے یہ کوئی راکٹ سائنس والی بات نہیں۔ حکومت کے لیے میڈیا کے زور پر ینگ ڈاکٹرز کو مجرم ثابت کرنا چند سکوں کا کھیل ہے۔

conversation-with-jamshed-dilawar

ینگ ڈاکٹرز کے مطابق ان کے ہڑتال فقط آؤٹ ڈور مریضوں کے لیے تھی، ایمرجنسی میں‌وہ کام کر رہے تھے، تاہم پولیس کے دھاوں، تشدد اور گرفتاریوں کے ڈر سے وہ بھاگ گئے ہیں، ڈاکٹروں پر پولیس کے تشدد سے متعدد ڈاکٹرز شدید زخمی ہو چکے ہیں۔

حکومت پنجاب کا ڈاکٹروں کو دو گناہ تنخواہ دینے کا پراپیگنڈا بھی سچ پر مبنی نہیں ہے۔ ایسا لگ رہا ہے کہ حکومت ان ڈاکٹروں کے خلاف محاذ کھول چکی ہے۔ حکومت ڈاکٹروں کے ساتھ کیے گئے وعدوں سے بھی مکر رہی ہے اور ان کا سروس سٹرکچر بہتر بنانے اور دیگر جائز مطالبات پر دستخط کرنے کے بعد بھی مکر رہی ہے۔

conversation-with-dr-yasar-ijaz

ڈاکٹروں پر تشدد

اور آخر میں وسعت اللہ خان کے ان الفاظ کے ساتھ اختتام کرنا چاہوں گا۔

جب سے پنجاب میں شہبازی حکومت آئی ہے صحت کا شعبہ ممولہ بن گیا ہے۔کبھی ڈینگی مچھر یلغار کرتا ہے تو کبھی جعلی ادویات کا اژدھا دل کے مریض نگل جاتا ہے تو کبھی اسپتال میں بجلی کا شارٹ سرکٹ نوزائدہ بچوں کو بار بی کیو بنا دیتا ہے۔کبھی نرسیں مال روڈ پر ڈنڈے کھاتی ہیں تو کبھی جونئیر ڈاکٹرخدمتِ انسانیت کے حلف نامے کو زمین پر بچھا کے اسی پر بیٹھ جاتے ہیں۔کان سیدھا پکڑیں کہ گھما کے ، ہاتھ میں بیمار کا کان ہی آتا ہے۔ ڈاکٹروں کا سروس اسٹرکچر بھی سیدھا نہیں ہورہا اور مریض کا اسٹرکچر بھی اوندھا پڑا ہے۔

ہاں ! میں حکومتِ پنجاب کے موقف کی حمایت میں دھڑلے سے لکھنا چاہتا ہوں اگر صرف یہ بتا دے کہ سستی روٹی کے تندور میں جھونکے جانے والے اربوں روپے موجودہ سرکاری سکولوں کو دانش سکول اور سرکاری اسپتالوں کو دانش اسپتال بنانے پر بھی تو لگ سکتے تھے۔۔۔اگر پولیس اور صوبائی بیوروکریسی کی تنخواہوں اور مراعات میں بہانے بہانے اضافہ ہوسکتا تھا تو ڈاکٹروں اور نیم طبی عملے نے کونسی بکری چرا لی تھی ؟

young doctors strike in punjab

وسعت اللہ خان کا مکمل مضمون بی بی سی پر دستیاب ہے۔

About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Features, Urdu and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

7 Responses to ڈاکٹروں کی بھی سنیں، ڈاکٹروں کو بھی کہنے دیں

  1. Asad Habeeb says:

    بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

  2. Pingback: A plea from a young doctor | Yasir Imran Mirza

  3. ibrar0 says:

    اگر اپنا پیٹ کاٹ کر ڈاکٹر کو ڈاکٹر بنانے والے والدین نہ ہوتے اور یہ ڈاکٹر کے بجائے صرف ایک معمولی کارکن ہوتے اور بیمار ہوجاتے اور کوئی او پی ڈی ڈاکٹر انہیں دیکھنے سے انکار کردیتا تو پھر اس ڈاکٹر کے گلے میں وہ کتنے ہار ڈالتے ؟

    تو کیا پنجاب کے جونئیر ڈاکٹر کو خیبر پختون خواہ ، سندھ اور بلوچستان کے جونئیر ڈاکٹرسے بھی کم تنخواہ اور مراعات مل رہی ہیں، یا باقی صوبائی حکومتیں کم ظالم ہیں ، یا ان صوبوں کے ڈاکٹروں کو اپنے حقوق کا شعور نہیں ، یا وہ پنجاب کے بہادر ڈاکٹروں کے مقابلے میں بزدل ہیں ؟

    Do the Doctor’s Really believe that, they should protest while people are dying…If it is so, means army also have the right to do so in the time of war….But think effects of both of their protest, You will call this humanity…. :(

  4. Asad says:

    pakistan mei strike karna ab fashion ban gaya hai, ALLAH hum sb par reham kare. Aameen

  5. Raza khan says:

    way we are only thinking doctor are thay are king .our peopal is death evry day but thay are going to worng way

  6. Raza khan says:

    en doctor ka thou sar calam karna chheyha jo zaliam bangaya hane .mara matlab un doctor say ha jnhou nhee abhi abhi banjab ma jo kia .gareeb mar rahee thh our yah loug zalem jashen mana rahee thee.

    • bailal says:

      You are right Raza, Merra ye muakkaf hy Doctor logon ki hat-taal sy sirf gareeb awam hi marti hy, in ku chachyee tha ki PP Block (private Patient block) hosptials mn wo band karty aur apny private clinic band kar detay,,,,
      Pher dekhteey ye ameer loog linoo mn lagtey aur ghareeb awam bhi na marti,,,,, but doctors can only see for their packages and job structures on the lives of poor people, thats too bad

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s