علوم اسلامیہ سیکھنے کی جانب ایک قدم


دین اسلام کے طالبعلم جب دین کا مطالعہ شروع کرتے ہیں تو ان کے سامنے پہلا سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ علوم دینیہ کا مطالعہ کس طریقے سے کیا جائے۔ علوم دینیہ سے مراد دین اسلام کی پوری تاریخ میں ترقی پانے والے وہ علوم ہیں جو کسی نہ کسی پہلو سے دین سے متعلق ہیں اوران کا مطالعہ قرآن وسنت کو سمجھنے کے لیے ضروری ہے۔ ہمارے دینی مدارس میں ان میں سے بہت سے علوم پڑھائےجاتے ہیں۔علوم دینیہ کی اشاعت میں یہ مدارس نہایت ہی غیر معمولی کردار ادا کررہے ہیں۔
یوں توعلوم اسلامیہ کے تراجم دنیا کی بیشتر زبانوں میں دستیاب ہیں اور دنیا کے ہر خطہ میں ان علوم کو علاقائی زبانوں میں ترجمہ کے بعد مقامی سطحوں پر تدریسی امور سرانجام دیے جا رہے ہیں، لیکن اسلامی علوم کا ایک عظیم منبع عربی زبان کے ساتھ وابستہ ہے۔ قرآن کریم سے شروع ہو کر تفسیر اور حدیث کی کتب تک عربی زبان میں ہیں۔عربی ایک فصیح اور وسیع زبان ہے، اسی لیے قرآن کو اسی زبان میں اتارا گیا، ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ دنیا کی کسی اور زبان میں اللہ تعالی کا پیغام مکمل طور پر پہنچانا ممکن ہی نہ تھا۔ علوم دینیہ کے طالبعلم جب ان علوم میں مہارت حاصل کرنے کی کوشش کریں گےتو ایک خاص درجے تک پہچنے کے بعدان کے لیے مزید تحقیقی موادکا مطالعہ کرنا اور اسکا مفہوم سمجھنا عربی زبان جانے بغیر ممکن نہیں رہے گا۔
عربی جدید دنیا کے کئی ممالک کی مادری زبان ہے، لیکن ہر ملک کی عربی میں کچھ تغیرات، تلفظ کا فرق اورایک جیسے الفاظ کی آوازوں میں فرق ہے۔ان ممالک کے افراد جب آپس میں گفتگو کریں گےتو بلاشبہ وہ ایک دوسرے کی بات کا مطلب سمجھ جائیں گے لیکن وقت کے ساتھ ساتھ ان تبدیلیوں سے عربی زبان کے بنیادی قوانین ضرور متاثر ہو سکتے ہیں۔ تاہم عربی کی ایک قسم ایسی ہے جس میں کوئی تبدیلی ہوئی ہے نہ مستقبل میں ہونے کی گنجائش ہے، وہ ہے قرآنی عربی۔ اس عربی کو ہم معیار قراردے سکتے ہیں۔
محمد مبشر نذیر صاحب کا تعارف میں پہلے بھی کرا چکا ہوں۔ان سے ایک دوسری نشست میں ان کے متعلق مزید جاننے کا موقع ملا اور مجھے پہلے سے بھی زیادہ خوشی محسوس ہوئی اور ان کے مستقبل کے ارادے جاننے کا موقع ملا۔مبشر صاحب کی ایک تازہ ترین کاوش قرآنی عربی سیکھانے کے لیے نصاب (کورس) کا اجرا ہے۔ اس قرآنی عربی تدریسی پروگرام میں طالبعلم متعدد اسباق میں درجہ بدرجہ عربی زبان سے شناسائی حاصل کریں گے۔اس پروگرام کے اختتام پر طالبعلم قرآن و حدیث اور مسلم علماء کی عربی کتب کے مطالعے پر قادر ہو جائیں گے۔ اس پروگرام کو اس طرح سے ترتیب دیا گیا ہے کہ طالبعلم نہایت ہی آسانی سے ادبیات اسلامیہ میں استعمال ہونے والی عربی زبان سیکھ سکتے ہیں۔ اس پروگرام کو قرآنی عربی پروگرام کا نام دینے کی وجہ یہ ہے کہ اس پروگرام کا محور ومرکز قرآن مجید ہے۔
لوگ عموما دو وجوہات کی بنیاد پر عربی سیکھتے ہیں،قرآن مجید ، احادیث اور اسلامی لٹریچر کو سمجھا سکے اور دوسرے یہ کہ عربوں کے ساتھ جدید عربی میں گفتگو کی جاسکے۔ یہ پروگرام پہلے مقصد کی تکمیل کے لیے وضع کیاگیا ہے البتہ دوسرے مقصد کے لیے عربی سیکھنے والے بھی اس سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔
عربی دنیا کی منظم ترین زبان ہے ۔ اس کی وجہ سے اس کا سیکھنا بہت آسان ہے۔ اس کے قواعد وضوابط بہت واضح ہیں۔ اگر آپ یہ قواعد و ضوابط سیکھ لیں تو چند ہی ہفتوں میں آپ اس زبان کابڑا حصہ سمجھ سکتے ہیں۔قرآن و حدیث کو سمجھنے کے لیے ضروری ہے کہ ہم قرآن و حدیث اور اسلامی لٹریچر میں استعمال ہونے والی عربی سے واقفیت حاصل کر یں، اس کے اسالیب کو پہچانیں اور اس کے محاوروں سے واقفیت حاصل کریں۔
اس پروگرام کے اسباق پی ڈی ایف PDF کی فائلز میں مبشر صاحب کی ویب سائٹ پر موجود ہیں، اسباق میں جہاں کہیں ضروری ہے وہاں لفظوں کی آوازذہن نشین کروانے کےلیے آوازوں کی فائلز بھی ڈاون لوڈ کے لیے مہیا کی گئی ہیں۔
بنیادی طور پر اس کورس کے پانچ درجے ترتیب دیے گئے ہیں جو کہ مندرجہ ذیل ہیں۔

بنیادی عربی زبان

یہ ہر اس شخص کے لئے ہے جو اپنی روز مرہ زندگی کی ضروریات کے لئے عربی سیکھنا چاہتا ہو۔ اس میں قرآن مجید اور مشہور احادیث کو پڑھنا، اس کے عام مفاہیم کو سمجھنا، نماز کو سمجھنا اور بنیادی عربی گرامر شامل ہے۔

متوسط عربی زبان ۱

اس لیول پر علم النحو کا آغاز کیا گیا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ قرآن مجید، احادیث اور اسلامی لٹریچر کو شامل کیا گیا ہے۔

متوسط عربی زبان ۲

اس لیول پر علم الصرف کا آغاز کیا گیا ہے اس کے ساتھ ساتھ قرآن مجید، احادیث اور اسلامی لٹریچر کو اعلی درجے پر شامل کیا گیا ہے۔

متوسط عربی زبان ۳

اس لیول پر عربی گرامر یعنی علم الصرف اور علم النحو کی تکمیل کی گئی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ اعلی درجے پر قرآن مجید، احادیث اور اسلامی لٹریچر کو شامل کیا گیا ہے۔

اعلی عربی زبان

اس لیول پر علم المعانی، علم البیان اور علم البدیع کی تعلیم دی گئی ہے اور قرآن مجید، احادیث اور اسلامی لٹریچر کے اعلی اقتباسات کو شامل کیا گیا ہے۔

یہ پروگرام انگریزی اور اردو دونوں زبانوں میں دستیاب ہے۔ اس پروگرام کے لنکس یہ ہیں

انگریزی ورژن

http://www.mubashirnazir.org/Courses/Arabic/AR001-00-Arabic.htm

اردو ورژن

http://www.mubashirnazir.org/Courses/Arabic/AR001-00-Arabicurdu.htm

طالبعلموں کو عربی زبان سے اچھی طرح واقفیت دلا دینے کے بعد مبشر صاحب کے مزید پلانز بھی ہیں جن کا ذکر آئندہ انشاء اللہ

About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Features, Islam, Urdu and tagged , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

24 Responses to علوم اسلامیہ سیکھنے کی جانب ایک قدم

  1. Pingback: Tweets that mention Uloom-e-Islamia Seekhne ki janib aik qadam « Yasir Imran Mirza -- Topsy.com

  2. Pingback: آپکے بلاگ پر تازہ ترین پوسٹ - صفحہ 2 - پاکستان کی آواز - پاکستان کے فورمز

  3. موعید احمد says:

    دین کی اس سے بڑی خدمت کیا ہو سکتی ہے، اے کاش ہم بھی پڑھے لکھے ہوتے تو دین کے لیے کوئی کام سرانجام دیتے۔
    اللہ آپ کا بھلا کرے بھائی۔

    • Yasir Imran says:

      موعید بھائی، میرے بلاگ پر خوش آمدید
      آپ بھی دین کی خدمت کر سکتے ہیں، اور پڑھائی کرنے کے لیے عمر کی کوئی حد نہیں ہے، آپ زندگی کے کسی موڑ پر بھی ہوں آپ علم حاصل کر سکتے ہیں۔ آپ بھی مبشر صاحب کا کورس پڑھنا شروع کر دیجیے اور اس نیک پیغام کو آگے پہنچائیے۔ شکریہ

  4. لکھاری says:

    کبھی مبشر صاحب سے ملوائیے، اتنے بھلے آدمی سے ہم بھی فیض یاب ہو سکیں۔ بے شک وہی لوگ فلاح پانے والے ہیں جو اللہ تعالی کا پیغام آگے پہنچا رہے ہیں۔
    والسلام

  5. Faisal says:

    Mubashar sab is doing great work, send him my appreciation. I am intersted in learning arabic course, where can I get those tutorials??

  6. Saima says:

    Ye tu boht acha kam hai, Allah aapko iss maqsad main kamyab kary

  7. Muhammad Asif says:

    Assalaam u alaikum,
    Bohat acha likha hai ap nay or Mubashir Nazeer sahab ka bata kar to goya ap nay neki ki hai.JazakAllah.main bhi unka fan hoon.Allah Taala Apko or unko iska Ajar day.Ameen.

    • Yasir Imran says:

      محمد آصف بھائی
      میرے بلاگ پر خوش آمدید اور بہت شکریہ آپ کو تحریر پسند آئی، مبشر صاحب کے تو بہت سے فین ہیں اور اسکی وجہ ان کی دین کے لیے کاوشیں ہیں، اللہ ان کو ان کے نیک کاموں کا اجر دے ۔
      شکریہ

  8. السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ

    آپ سب بہن بھائیوں کے خلوص اور محبت کا بہت بہت شکریہ۔ اللہ تعالی آپ سب کو جزائے خیر دے۔ دعاؤں کی درخواست ہے۔ اس کورس کے میٹیریل کو دیکھ کر اپنے تاثرات سے آگاہ ضرور کیجیے گا۔ جب چاہیں بلاتکلف ای میل کیجیے۔

    والسلام
    مبشر

    • Yasir Imran says:

      مبشر بھائی
      بلاگ پر آنے اور تبصرہ کرنے کے لیے شکریہ۔
      ہماری دعائیں آپ کے مثبت اور نیک ارادوں کے ساتھ ہیں۔ اللہ آپکی مدد فرمائے اور ہمیں بھی اس قابل بنائے کہ ہم اپنے دین کو پھیلانے میں کوئی کردار ادا کر سکیں۔

  9. Pingback: Islamic Questions Answers Blog | Yasir Imran Mirza

  10. Pingback: علوم اسلامیہ سیکھنے کی جانب ایک قدم (via Yasir Imran Mirza) | testingonly Blog

  11. Fathima says:

    Assalamalykom,
    Brother i am very thankful for you for give me best web pages of Mubashar Nazir’s i downlode lots of thing from that wed pag like Quran and how to learn quran thanks alot brother allah solve your and our problem amin,

    • Yasir Imran says:

      Sister, can you understand URDU language and can read it ? wow its great. I hope you will find a lot of informative stuff on my blog and Mubashir brother’s website.

  12. khawar says:

    yasir bhai aaj pihli martba ap ki threratprheen dill koo but khushi hoi ma sha ALLaH ap ki guftgoo but shaista hay.

  13. بہت اچھے جناب
    یہاں تو بہت اچھا کام اور علمی ماحول ہے

    لگتا ہے اب اس بلاگ کے ساتھ رابطہ استوار کرنا پڑے گا،

  14. میں مبشر نذیر صاحب کے کالمز پڑھتا ہوں، عجیب مزہ دیتے ہیں۔ اللہ انہیں جزا دے۔

  15. ہمین پہلے خود کوشش کرنی چاہئے مساجد کوآباد کریں
    قرآن پڑھیں اور سنیں سمجھیں اور اس پر عمل کی کوشش کریں
    اپنی زندگی کو اس کے مطابق گزارنے کی کوشش کریں
    احادیث کا مطالعہ کریں
    یہ ایسی محافل میں شریک ہوں جہاں درس و تدریس ہوتی ہو
    مسلک و فرقہ واریت کو بھول جائیے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s