وہ حسیں لگتی ہے


سینٹ کی، کجلے کی اور غازے کی گلکاری کے بعد
وہ حسیں لگتی ہے لیکن کتنی تیاری کے بعد
مدتوں کے بعد اس کو دیکھ کر ایسا لگا
جیسے روزہ دار کی حالت ہو افطاری کے بعد
باندھ کر سہرا نظر آئے ہیں یوں نوشہ میاں
جس طرح مجرم دکھائی دے گرفتاری کے بعد

ہیروئن پچپن برس کی ہوچکیں تو غم نہیں
اب گلو کاری کریں گی وہ اداکاری کے بعد
قو کو بیدار کر ڈسکو میوزک چھیڑ کر
جو بچاری سو چکی ہے راگ درباری کے بعد
عید پر مسرور ہیں دونوں میاں بیوی بہت
اک خریداری سے پہلے اک خریداری کے بعد
عقدِ ثانی کا مزا پوچھا تو بولے شیخ جی
ایسے لگتا ہے، چکن چکھا ہے ترکاری کے بعد
راہِ الفت کی ٹریفک ہو کہ ”موٹروے” کی ہو
حادثے ہوتے ہیں شاہد تیز رفتاری کے بعد

About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Poetry, Urdu and tagged , , , , , . Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s