بڈھی دے تھلے لگا


ہتھ وچ سگریٹ ، کن وچ مُندر
کھلی دھوتی ، لما چگا
‌لوکی مینوں‌کہہ دیندے ، اے بڈھی دے تھلے لگا

تھلے لگن آلا بھلا کم ہے کہڑا
او کردی اے ہانڈی روٹی
میں دھو لینا واں ویڑا
تے پانی دے وچ ایداں پھرنا
جوں راوی دے وچ کھگا
لوکی مینوں‌کہہ دیندے ، اے بڈھی دے تھلے لگا

بڈھی وی تے آخر رب دا جی اے
ایندے نال کرائیے کم تے ہندا کی اے
او شوپنگ لئی جاندی جدوں بازار
میں ہناں واں گھار نہیں جاندا باہر
بھر کے فیڈر دے دیناں واں جے روؤئے کوئی مُنی یا بگا
لوکی مینوں‌کہہ دیندے ، اے بڈھی دے تھلے لگا

گھر وچ کرنا پالش جُتی
او ہندی اے لاگے سُتی
اونوں نئی میں کدے اُٹھاندا
اپنی چاء میں آپ بناؤندا
آپے پیواں اک پیالی
اونوں دیواں بھر کے مگا
لوکی مینوں‌کہہ دیندے ، اے بڈھی دے تھلے لگا

اسیں تے گھر وچ راضی باضی رہی دا
پر ماپیاں نوں نئی بڈھی اگے بولن دیدا
زولفی ایویں بندا کھد پڑوا لوے
ایویں گھر وچ بن کے جگا
لوکی مینوں‌کہہ دیندے ، اے بڈھی دے تھلے لگا


اصلی تحریر میں اضافہ: تلخابہ کی فرمائش پر اردو میں ترجمہ، یہ ترجمہ نہ تو پنجابی نظم کی100 فیصد ترجمانی کر سکتا ہے، قافیہ بھی نہیں‌ملے گا اور نظم کا وہ مزا بھی نہیں آئے گا جو پنجابی میں ہے۔ تاہم صرف سمجھنے کے لیے یہ چھوٹی سی کاوش کی ہے۔

میرے ہاتھ میں سگریٹ اور کان میں بالی
کھلی سی دھوتی اور لمبا سا کرتا
لوگ مجھے کہتے ہیں کہ میں‌اپنی گھروالی سے دبتا ہوں۔

اب اس میں دبنے والی کیا بات ہے
وہ کھانا بناتی ہے اور روٹی پکاتی ہے
میں صحن دھو لیتا ہوں
اور پانی میں ایسے پھرتا رہتا ہوں
جیسے راوی میں کشتی چل رہی ہو
لوگ مجھے کہتے ہیں کہ میں‌اپنی گھروالی سے دبتا ہوں۔

گھروالی بھی تو رب کی مخلوق ہے
اگر میں کام کاج میں اس کی مدد کروں تو اس میں کیا برا ہے
جب وہ خریداری کے لیے باہر جاتی ہے
میں گھر سے باہر نہیں جاتا
اگر بچے روئیں تو انہیں فیڈر میں دودھ ڈال دیتا ہوں
لوگ مجھے کہتے ہیں کہ میں‌اپنی گھروالی سے دبتا ہوں۔

اپنے جوتے بھی خود پالش کر لیتا ہوں
وہ سو رہی ہوتی ہے
میں اسے نہیں جگاتا
اور اپنے لیے چائے بھی خود بنا لیتا ہوں
خود تو ایک کپ پیتا ہوں
اور اسے بڑاکپ بھر کر دیتا ہوں
لوگ مجھے کہتے ہیں کہ میں‌اپنی گھروالی سے دبتا ہوں۔

ہم گھر میں خوش رہتے ہیں
اور ماں باپ کو گھر میں مداخلت نہیں کرنے دیتے
زولفی گھر میں لڑائی جھگڑا کرنے کیا کیا فائدہ
گھر والوں پرسختی کا کیا فائدہ
لوگ مجھے کہتے ہیں کہ میں‌اپنی گھروالی سے دبتا ہوں۔

About Yasir Imran

Yasir Imran is a Pakistani living in Saudi Arabia. He writes because he want to express his thoughts. It is not necessary you agree what he says, You may express your thoughts in your comments. Once reviewed and approved your comments will appear in the discussion.
This entry was posted in Poetry, Urdu and tagged , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink.

7 Responses to بڈھی دے تھلے لگا

  1. talkhaaba says:

    اس کا اردو ترجمہ لکھ دیں گے تو سونے پر سہاگہ ہوجائے گا۔

  2. Yasir Imran says:

    بھائی ۱۰۰ فیصد ترجمہ تو شاید ممکن نہ ہو خیر کوشش کروں گا کچھ دیر تک۔

  3. یاسر
    تھلے تقریبا سب ہی لگے ہوتے ہیں بس غریب آدمی جھاڑو وغیرہ دے لیتا ہے اور صاحب لوگ اپنے کریڈٹ کارڈ پر جھاڑو پھروا لیتے ہیں۔

  4. السلام علیکم ورحمۃ وبرکاتہ،
    تھلے لگن آلا بھلا کم ہے کہڑا
    او کردی اے ہانڈی روٹی
    میں دھو لینا واں ویڑا
    تے پانی دے وچ ایداں پھرنا
    جوں راوی دے وچ کھگا

    بہت خوب جی یاسرعمران صاحب بہت خوب اچھالکھاہے۔ اللہ تعالی تحریر میں اوردم و خم دے۔ آمین ثم امین
    والسلام
    جاویداقبال

  5. Yasir Imran says:

    خرم بھائی، بہت شکریہ

    محمد ریاض صاحب
    درست فرما رہے ہیں، بڈھی دے تھلے لگو تے بڈھی وی خوش تے تسی وی خوش، تواڈا گھر وی ٹھیک ٹھاک چلدا رہے گا، لیکن ماپیاں نوں وی ٹائم دینا چاہی دا۔

    جاوید اقبال بھائی
    شکریہ تسی نظم پسند کیتی ، پر اے میں نئی لکھی
    میں اینے جوا ہوندا تے کی چاہی دا سی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s